Search

Politics By W.B.Yeats

Politics By W.B. Yeats
 
REFERENCE: These lines have been taken from “Politics”written by “W.B. Yeats.”
CONTEXT: In this poem, the poet says that love is the most dominating passion of all the things. He considers the powerful world of politics meaningless. He is ready to reject the politics of the world and wishes to be young again to embrace the beautiful girl standing before him.
سیاق و سباق: اس نظم میں شاعر کہتا ہے کہ تمام چیزوں سے زیادہ غالب آنے والا جذبہ محبت ہے۔  وہ سیاست کی طاقت ور دنیا کو بے معنی سمجھتا ہے۔ وہ دنیا کی سیاست کو مسترد کرنے کیلئے تیار ہے اور  اپنے سامنے کھڑی ہوئی خوبصورت لڑکی کو گلے لگانے کیلئے دوبارہ  جوان ہونے کی خواہش کرتا  ہے۔                                                                                                                                          
EXPLANATION: This poem contains a very beautiful idea. The poet compares politics with love. He says that politics at present is the most powerful field of life. It has taken firm roots in all walks of life. All the areas of life have been contaminated by corruption involved in politics but there is something better and greater than this politics. It is love which is the most powerful of all the passions. It is so powerful that a man can overlook all the other things. In the given lines, the poet says that there are many travelers and experienced politicians, who have great knowledge of the situation around them. They may talk about war and its dangers. They may be mature in their thinking but they will be utterly helpless before the charming and fascinating beauty of a girl. They would be ready to overlook the politics and unable to resist her charm. The poet also wishes to ignore politics and be young again so that he may make love to the beautiful girl.

تشریح: اس نظم کا خیال بہت خوبصورت ہے۔ شاعر سیاست کا محبت سے موازنہ کرتا ہے۔ وہ کہتا ہے کہ اسوقت سیاست زندگی کا سب سے طاقتور شعبہ ہے۔ اس نے زندگی کے تمام شعبوں میں مظبوط جڑیں پکڑی ہوئی ہیں۔ زندگی کےتمام  شعبے  سیاست میں موجود بد عنوانی کی وجہ سے  گندے ہو گئے ہیں لیکن اس سیاست سے بہتر اور اچھی چیز بھی ہے۔ یہ محبت ہے جو تمام جذبات سے زیادہ طاقتور ہے۔ یہ اتنی طاقتور ہے کہ ایک آدمی تمام دوسری چیزوں کو نظر انداز کر سکتا ہے۔ دی گئی لائنوں میں شاعر کہتا ہے کہ بہت سارے سیاح اور  تجربہ کار سیاستدان ہیں  جو انکے ارد گرد صورت حال کا بہت علم رکھتے ہیں۔ وہ جنگ اور اسکے خطرات کے متعلق بات کرسکتے ہیں۔  ہو سکت اہے کہ وہ اپنی سوچ میں بہت پختہ ہوں  لیکن وہ  ایک لڑکی کی مسحور کن خوبصورتی کے سامنے مکمل طور پر لا چار ہونگے۔ وہ سیاست کو نظر انداز کرنے کو تیار ہونگے اور اسکی خوبصورتی سے بچ نہیں پائیں گے۔ شاعر بھی سیاست کو نظر انداز کرنے کی اور دوبارہ جوان ہونے کی خواہش کرتا ہے  تا کہ وہ اس خوبصورت لڑکی سے پیار کر سکے۔